انسانی کہانیاں عالمی تناظر

انڈیا: آسام میں طوفانی بارشوں سے 85 افراد ہلاک

کازیرنگا نیشنل پارک کے ہاتھی (فائل فوٹو)۔
Gregoire Dubois
کازیرنگا نیشنل پارک کے ہاتھی (فائل فوٹو)۔

انڈیا: آسام میں طوفانی بارشوں سے 85 افراد ہلاک

موسم اور ماحول

انڈیا کی ریاست آسام میں آنے والے شدید سیلاب سے 30 لاکھ افراد متاثر ہوئے ہیں اور اب تک 85 ہلاکتوں کی تصدیق ہو چکی ہے۔ اقوام متحدہ کے امدادی اداروں نے متاثرہ علاقوں میں امدادی کارروائیاں شروع کر دی ہیں۔

ریاست میں گزشتہ چند روز سے شدید بارشوں کے باعث دریائے برہم پترا سمیت تمام آبی گزرگاہوں میں سیلاب  کی کیفیت ہے۔ سیلابی پانی سے 27 اضلاع میں تین ہزار سے زیادہ دیہات زیرآب آ گئے ہیں اور 40 ہزار ہیکٹر پر زرعی اراضی کو نقصان پہنچا ہے۔ بعض علاقوں میں پانی اتر گیا ہے جبکہ بیشتر جگہوں پر ہنگامی حالات برقرار ہیں۔

مقامی انتظامیہ کی جانب سے متاثرہ علاقوں میں 293 امدادی مراکز کا انتظام کیا گیا ہے جن میں 53 ہزار سے زیادہ لوگوں نے پناہ لے رکھی ہے۔ ان مراکز میں سیلاب متاثرین کو اقوام متحدہ کے تعاون سے مدد مہیا کی جا رہی ہے اور اب تک تین لاکھ سے زیادہ لوگوں کو ضروری اشیا فراہم کی جا چکی ہیں۔

املاک کا نقصان

اطلاعات کے مطابق، ضلع دھوبری سیلاب میں سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے۔ اس کے بعد کچہر اور بارپیٹا میں بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی ہے جبکہ سیلابی پانی اب جورہاٹ، تیز پور، کامروپ، تینسوکیا سمیت کئی دوسرے اضلاع میں پھیل رہا ہے۔

ابتدائی اندازوں کے مطابق اس قدرتی آفت نے ساڑھے تین ہزار سے زیادہ مکانات کو نقصان پہنچایا ہے۔ جبکہ سڑکیں، مواصلات، ٹیلی فون، پانی اور بجلی کی فراہمی سمیت ضروری خدمات بھی متاثر ہوئی ہیں۔

نایاب جانوروں کی ہلاکتیں

200 سے زیادہ چھوٹے بڑے جانور بھی سیلابی پانی میں بہہ گئے ہیں اور کازیرنگا نیشنل پارک میں 114 جنگلی جانوروں کی ہلاکت ہوئی ہے جن میں نایاب نسل کے چھ گینڈے بھی شامل ہیں۔ یہ نیشنل پارک دنیا میں ایک سینگ والے گینڈے کی سب سے بڑی آبادی کا مسکن ہے جو اس صدی کے آغاز میں معدومیت کے دہانے پر تھے۔

ملحقہ ریاست منی پور کے علاقے امپھال میں سیلاب کے بعد صورتحال میں بہتری آئی ہے اور بیشتر مقامات پر پانی اتر رہا ہے۔ اس ریاست میں 12 اضلاع کے 84 دیہات اور 26 ہزار سے زیادہ لوگ متاثر ہوئے ہیں۔