انسانی کہانیاں عالمی تناظر

برطانیہ: پناہ گزینوں کی روانڈا منتقلی کے خلاف عدالتی فیصلے کا خیر مقدم

پناہ کے درخواست گزاروں کو برطانیہ سے روانڈا منتقل کرنے کی برطانوی پالیسی کو انسانی حقوق کی تنظیموں نے چیلنج کر رکھا تھا۔
© Unsplash/Kid Circus
پناہ کے درخواست گزاروں کو برطانیہ سے روانڈا منتقل کرنے کی برطانوی پالیسی کو انسانی حقوق کی تنظیموں نے چیلنج کر رکھا تھا۔

برطانیہ: پناہ گزینوں کی روانڈا منتقلی کے خلاف عدالتی فیصلے کا خیر مقدم

انسانی حقوق

اقوام متحدہ میں پناہ گزینوں کے ادارے 'یو این ایچ سی آر' نے پناہ کے خواہش مند لوگوں کی برطانیہ سے روانڈا منتقلی کے مجوزے منصوبے کو برطانیہ کی کورٹ آف اپیل کی جانب سے غیر قانونی قرار دیے جانے کے فیصلے کا خیرمقدم کیا ہے۔

پناہ کے درخواست گزاروں کو برطانیہ سے روانڈا منتقل کرنے کی برطانوی پالیسی کو انسانی حقوق کی تنظیموں نے چیلنج کر رکھا تھا جبکہ یو این ایچ سی آر عدالت میں بطور گواہ کے پیش ہوا۔

برطانوی کورٹ آف اپیل کے فیصلے کو سراہتے ہوئے یو این ایچ سی آر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ اس معاملے میں اس کردار پناہ گزینوں سے متعلق 1951 کے کنونشن کے نفاذ کے حوالے سے عالمگیر نگرانی کے سلسلے میں اس کی طے شدہ ذمہ داریوں کے عین مطابق رہا۔ ’عدالتی کارروائی میں ادارے کا کردار مدعی کا نہیں تھا تاہم اس نے عدالت کو پناہ گزینوں سے متعلق بین الاقوامی قانون سے متعلق مشاورت مہیا کی۔‘

’انسان دوست طریقہ‘

'یو این ایچ سی آر' نے عدالت کے روبرو پناہ گزینوں کے ساتھ 'ملک سے باہر نمٹنے' کے بارے میں اپنے دیرینہ اور عام خدشات کا اظہار کیا، اور برطانیہ کی حکومت پر زور دیا کہ وہ اس کے بجائے دیگر طریقہ ہائے کار سے کام لے جس میں برطانیہ کے یورپی ہمسایوں کے ساتھ تعاون اور پناہ سے متعلق ایسے منصفانہ اور تیز تر طریقے شامل ہیں جو انسان دوست، موثر اور کم خرچ ہوں۔

اطلاعات کے مطابق برطانوی کورٹ آف اپیل نے روانڈا کو پناہ کے متلاشی افراد کے لیے غیر محفوظ قرار دیتے ہوئے حکومتی پالیسی کو غیر قانونی قرار دیا ہے۔ برطانوی وزیر اعظم رشی سوناک نے عدالتی فیصلے پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے اسے چیلنج کرنے کا عندیہ دیا ہے۔